پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اور سندھ کے صوبائی وزیر سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ احتساب پاکستان پیپلز پارٹی کے لئے کوئی نئی چیز نہیں ہے۔ پیپلز پارٹی کی قیادت ایک طویل عرصے سے ان حربوں کا سامنا کر رہی ہے اور وہ جھوٹے مقدمات کا سامنا کرنے سے دریغ نہیں کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ چیئرمین کا ان کے خلاف ایک اسکینڈل منظرعام پر آنے کے بعد ہی استعمال ہو رہا ہے۔ وہ جمعرات کی صبح نیب عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ سید خورشید احمد شاہ کی گرفتاری غیر قانونی اور غیر اخلاقی ہے۔ سید خورشید شاہ نیب سے بھاگ نہیں رہے تھے لیکن چیئرمین پی پی پی کے ذریعہ طلب پارٹی کے کور کمیٹی اجلاس میں شرکت کے لئے اسلام آباد تھے۔

ناصر حسین شاہ نے کہا کہ سابق صدر زرداری اور فریال تالپور کا شکار ہیں۔ محترمہ فریال تالپور کو عید کے موقع پر اسپتال سے جیل منتقل کردیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا کا کہنا ہے کہ سیاستدانوں کی گرفتاری کے لئے ایک طویل فہرست ہے لیکن پیپلز پارٹی کسی فہرست سے خوفزدہ نہیں ہے۔ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ چیئرمین بلاول کی کال پر لاکھوں افراد احتجاج کرتے ہوئے آئیں گے۔