چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے پارٹی کارکنوں ، عہدیداروں اور منتخب نمائندوں کے خلاف قومی احتساب بیورو (نیب) کے غیر قانونی اقدام کی مذمت کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پارٹی کی اعلی قیادت اور اہم رہنماؤں کی جادوگرنی کے بعد اب نیب کو پارٹی کارکنوں کو نشانہ بنانے کا کام سونپا گیا ہے۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے کہا کہ ضلعی جیکب آباد میونسپل کمیٹی کے چیئرمین غلام عباس جکھرانی تک سیاسی تشدد کا دائرہ بڑھانا بلدیاتی نظام کو ختم کرنے کے مترادف ہے۔ نیب کی غیر قانونی کارروائیوں کی وجہ سے بیوروکریسی نے پہلے ہی کام کرنا چھوڑ دیا ہے اور اب ایل بی کے منتخب نمائندوں کو نیا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ظلم کی طاقتیں جو عوام کی طاقتوں سے ہمیشہ خوفزدہ رہتی ہیں پچھلے 72 سالوں سے پولیٹیکل انجینئرنگ میں مصروف ہیں۔ یہ بات واضح ہے کہ سیاستدانوں کی پولیٹیکل انجینئرنگ اور جادوگرنی کے شکار کا نتیجہ ہمیشہ آمرانہ اقتدار میں ہی ختم ہوتا ہے۔ ایبڈو اور پروڈو جیسے خصوصی قوانین کو پولیٹیکل انجینئرنگ کے آغاز کے لئے نافذ کیا گیا تھا اور اب ایسے قوانین کا نام تبدیل کرکے نیب رکھا گیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ جیکب آباد میونسپل کمیٹی کے چیئرمین غلام عباس جکھرانی کے خلاف نیب کا اقدام سیاسی مظلومیت کا سراسر حصہ ہے۔