اسلام آباد(7نومبر 2019)

 سابق صدر آصف علی زرداری کے ترجمان عامر فدا پراچا نے کہا ہے کہ سابق صدر آصف علی زرداری کے لئے پرائیویٹ میڈیکل بورڈبٹھانے میں تاخیر پر سخت تشویش ہے۔ آصف علی زرداری کی صحت کے حوالے سے پارٹی اور خاندان کو لاعلم رکھا جا رہا ہے۔ سلیکٹڈ حکومت کا آصف علی زرداری سے متعصبانہ رویہ شرمناک ہے۔ ایک بیان میں عامر فدا پراچا نے کہا کہ آصف علی زرداری کے لئے پرائیویٹ بورڈ نے آرتھوپیڈک سرجن ڈاکٹر عاصم حسین ، نیورو سرجن رشید جمعہ، نیرولوجسٹ ڈاکٹر سلمیٰ مداح، کارڈیالوجسٹ ڈاکٹر میجر جنرل ظفر، اینڈوکرینولوجسٹ ڈاکٹر توفیق کو بھی شامل کیا جائے۔ جو سابق صدر کی صحت کی ہسٹری کی مکمل معلومات رکھتے ہیں۔ عامر فدا پراچا نے کہا کہ سلیکٹڈ حکومت سرکاری بورڈ کی سفارشات پر عمل نہیں کر رہی جس میں سابق صدر کی صحت کے حوالے سے خطروں سے آگاہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ شوگرلیول بے قابو ہونا، خون کی شریانوں میں خون کا جم جانا اور ہارٹ بیٹ میں پیچیدگیاں سابق صدر کی زندگی کے لئے خطرہ بن رہی ہیں۔ اس طرح جیل میں کمر کے درد کا مناسب علاج نہ ہونے کی وجہ سے کمر درد کی شدت میں اضافہ ہو رہا ہے۔ سابق صدر کے ترجمان نے کہا کہ دنیا یا ملک کی تاریخ میں ایسی کوئی مثال نہیں ملتی کہ مقدمہ ایک صوبے میں داخل کیا جائے اور اس کا ٹرائل دوسرے صوبے میں کیا جائے۔ اس طرح کا طرز عمل بغض، تعصب اور مخاصمت کو بے نقاب کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سلیکٹڈ حکومت سابق صدر کے طبی علاج کے بنیادی حق کو غصب کر رہی ہے۔ انہوں نے ایک مرتبہ پھر مطالبہ کیا کہ سابق صدر کی زندگی بچانے کے لئے ان کی مرضی کے معالجین سے علاج کرایا جائے۔