پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ یہ وقت ہے کہ ہم آپس کی لڑائی بھول کر ایک ہو جائیں جیسے جنگ اور قدرتی آفات میں ہم سب ایک ہو جاتے ہیں۔ اس وقت ایسے ہی اتحاد کی ضرورت ہے۔ آج ہمیں ایک ہونے کی ضرورت ہے۔ صوبے وفاق کی جانب دیکھ رہے ہیں اور پرامید ہیں کہ وفاق سب کو برابری کی بنیاد پر ڈیل کرکے ضروریات پوری کرے گا۔ ہر صوبے کی وفاقی نے مدد کرنا ہوگی۔ ٹیسٹنگ کٹس فرہام کرنے ہوں گی۔ وفاق نے ہر صوبے ڈاکٹروں کے لئے حفاظتی لباس پہنچانا ہوگا۔ وفاق کو ہر صوبے کے بیمار افراد کے لئے وینٹی لیٹرز فراہم کرنا ہوں گے۔ ہم سب کو کورونا وائرس کا مقابلہ کرنا ہوگا جو ایک دوسرے کی مدد کے بغیر ممکن نہیں۔ اپنے یک ویڈیو پیغام میں چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ آج 4اپریل کو ملک بھر سے لاکھوں پی پی پی کے جیالے گڑھی خدابخش جمع ہوتے ہیں اور قائد عوام شہید ذوالفقار علی بھٹو کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔ آج میں اکیلا دعا کرنے کے لئے گڑھی خدا بخش آیا ہوں۔ میرے اکیلے گڑھی خدابخش میں دعا مانگنے کی وجہ دنیا بھر میں کورونا وائرس کا پھیلاﺅ ہے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ دنیا بھر کی حکومتیں اپنے عوام کی زندگیوں اور صحت کو بچانے کے لئے مشکل فیصلے کر رہی ہیں۔ پاکستان میں بھی آپ کی زندگی کو بچانے کے اور صحت کے تحفظ کے لئے مشکل فیصلے لیے جا رہے ہیں۔ چیئرمین پیپلزپارڑٹی نے کہا کہ میں ان پاکستانیوں کا شکرگزار ہوں جو اس مشکل وقت میں امداد دے کر اپنا کردار ادا کر رہے ہیں۔ میں جانتا ہوں کہ پاکستان کے عوام غریبوں کی مدد کر رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت مختلف فلاحی اداروں اور سیاسی جماعتوں کے ساتھ مل کر کر کام کر رہی ہے اور کوشش کر رہی ہے کہ تمام مستحقین کو راشن پہنچایا جا سکے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ سندھ حکومت کی کوشش ہے کہ غریب عوام کم سے کم مشکلات سے دوچار ہوں۔ سندھ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ کوئی ادارہ اس بحران میں کسی کو بیروزگار نہیں کر سکتا اور یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ اس بحران میں دارے ملازمین کو پوری تنخواہ ادا کریں گے۔ چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ سندھ حکومت زکواة کی رقم مستحقین میں تقسیم کر چکی ہے اور فلاحی اداروں کے ساتھ مل کر عوام تک راشن پہنچا رہی ہے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہم اکیلے یہ کام نہیں کر سکتے ہمیں آپ سب کی مدد کی ضرورت ہے۔ میں اپیل کرتا ہوں کہ اگر آپ امداد کر سکتے ہیں تو ہمارا ساتھ دیں تاکہ ہم غریب عوام کا خیال رکھ سکیں۔ چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ اس وقت سب سے اہم تقاضا اپنی صحت اور زندگی کا خیال رکھنا ہے گھروں میں محدود رہ کر اور ڈاکٹروں کے مشورے کو مان کر آپ اپنی زندگی کو بھی محفوظ بنا سکتے ہیں اور دوسروں کی گھی۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ یہ بھی ضروری ہے کہ فرنٹ لائن پر کورونا وائرس کا مقابل کرنے والے طبی عملے پر ہم کم سے کم بوجھ ہوں۔ یہ کامیابی اس صورت میں ممکن ہے کہ جب پاکستان کے عوام ہمارے ساتھ مل کر اس بحران کا مقابلہ کریں۔ یہ وقت ہے کہ ہم آپس کی لڑائی کو بھول کر ایک ہو جائیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی تجاویز کو مانتے ہوئے عوام اپنے گھروں میں رہیں اور سماجی فاصلہ اختیار کریں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کسی مستحقین کی امداد کر سکتے ہیں تو آپ کو ضرور اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔ مجھے امید ہے کہ ہم عوام کی مدد سے اس مشکل صورتحال سے نکل جائیں گے۔ اس کے علاوہ چیئرمین پیپلزپارٹی نے آج صبح گڑھی خدا بخش میں اپنے نانا شہید ذوالفقار علی بھٹو کے مزار پر حاضری دی اور ان کے بلند درجات کے لئے دعا کی۔ واضح رہے کہ 4اپریل کو گزشہ 40برسوں سے لاکھوں افراد گھڑی خدا بخش میں حاضری دیتے ہیں مگر اس بار چیئرمین پیپلزپارٹی کی ہدایات کے مطابق گڑھی خدا بخش نہیں پہنچی۔ اس سے قبل بھی محترمہ بینظیر بھٹو شہید نے اپنی زندگی میں یوم آشور کے احترام میں قائدعوام بھٹو کا یوم شہادت موخر کیا تھا۔