پاکستان پیپلز پارٹی کی مرکزی رہنماﺅں نے کہا ہے کہ پچیس جولائی کو پاکستان کی تاریخ میں بدترین پولیٹیکل انجینئرنگ کرکے سلیکشن کی گئی جن کو چیئرمین پیپلز پارٹی نے اپنی اسمبلی کی پہلی تقریر میں ہی سلیکٹڈ وزیراعظم کہہ دیا تھا ،100 دن کا پلان لے کر آئے تھے لیکن 700دن گزر جانے کے باوجود صرف یو ٹرن ہی لئے گئے ہیں اس کے علاوہ کچھ نہیں کیاگیا، صدارتی محل غیر قانونی آرڈیننس اور نوٹیفکیشن جاری کررہا ہے ،اسامہ کوشہیدکہا جاتاہے ،ابھیندن کو ایک دن چھوڑ دیاگیا ، اب کلبھوشن بچا? بھگا? آرڈیننس لایا جارہا ہے جب پوچھا جاتا ہے تو دھمکیاں دلوائی جاتی ہیں ،بتایا جائے کہ کشمیرکامعاملہ ابھیندن اور کلبھوشن کے معاملے کے حوالے سے فیصلے قومی مفادات میں کئے جاتے رہے ہیں جو وزیر و مشیروامپورٹ کئے گئے ہیں ان کے حوالے سے جے آئی ٹی بنائی جائے تاکہ پتہ چلے کہ ان کی وفاداریاں پاکستان کے ساتھ ہیں یا کسی اور کے ساتھ ، نیب ایک غیر آئینی ادارہ ہے ان کی تحویل میں جتنے بھی لوگ ہیں ان کو رہا کیاجائے ،حکومت نے زراعت کو ٹڈی دل کے حوالے کردیا ہے ، زلفی بخاری ٹیکس ادا نہیں کرتا لیکن دبئی میں کس قانون کے تحت معاہدے کررہا ہے جبکہ قاضی فائز عیسیٰ کی اہلیہ ایف بی آر کے چکر لگارہی ہے۔ ان خیالات کااظہار پاکستان پیپلز پارٹی کی مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر نفیسہ شاہ ، ڈپٹی سیکرٹری اطلاعات پلوشہ خان نے مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا ، نذیر ڈھوکی بھی ان کے ہمراہ تھے۔ نفیسہ شاہ نے کہا کہ پچیس جولائی کو پاکستان تاریخ کی بدترین پولیٹیکل انجینئرنگ کرکے سلیکشن کی گئی تھی جس کے حوالے سے پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اسمبلی میں اپنی پہلی تقریر میں وزیراعظم کو سلیکٹڈ کہا تھا انہوں نے کہا کہ قاضی فائز عیسی کی اہلیہ ایف بی آر کے چکر لگارہی ہے اور زلفی بخاری کہتے ہیں کہ مجھ سے غلطی ہوگئی ہے میں نے اپنا ٹیکس جمع نہیں کرایا وہ دبئی میں کس قانون کے تحت معاہدے کررہے ہیں حکومت اب کلھبوشن بچا? اور بھگا? آرڈیننس لے کر آرہی ہے انہوں نے کہا کہ نیب کے ذریعے پارلیمانی کمیٹیوں کی انجینئرنگ ہورہی ہے اوراب تو عدلیہ کی طرف سے بھی پولیٹیکل انجینئرنگ اور سلیکٹڈ کے الفاظ استعمال کئے جارہے ہیں انہوں نے کہا کہ عدالت کہتی ہے کہ نیب الزامات کی بنیاد پر ہی پکڑ دھکڑ کررہی ہے حکومتی اراکین پر بھی الزامات ہیں مگر ان کو پوچھا جارہا جہانگیر ترین کا نام ای سی ایل میں شامل نہیں کیاگیااوروہ باہرجا کر مزے کررہے ہیں اگر اپوزیشن پر کوئی الزام ہوتو فوری گرفتار کرلیاجاتا ہے سلکیٹڈ نظام کا چلنا بہت مشکل ہے جب ان سے کوئی پوچھ گچھ کی جاتی ہے تو وہ دھمکیاں دینا شروع کردیتے ہیں 100دن کا پلان لے کر آئے تھے مگر 700دن گزر گئے صرف یوٹرن ہی لیتے رہے کہتے تھے کہ پولیس عدلیہ اورلوکل گورنمنٹ میں ریفارمز کرینگے وفاق مضبوط کرینگے این ایف سی کے حوالے سے نوٹیفکیشن غیر آئینی جاری کئے جارہے ہیں تیل ، گیس بجلی کی قیمتیں بڑھائی جارہی ہیں تاریخ میں پہلی مرتبہ گروتھ منفی میں آئی ہے زراعت کو ٹڈی دل کے حوالے کردیاگیا ہے انہوں نے کہا کہ عمران خان کہتے تھے اگر مودی آگیا تو کشمیر کا مسئلہ حل ہوجائیگا آج کشمیر ان کے حوالے کرکے کشمیری عوام پر ظلم کی انتہا کردی گئی ابھیندن کو ایک چائے پلا کر چھوڑ دیاگیا اب کلھبوشن بچا? و بھگا? آرڈیننس لایا جارہا ہے صدارتی محل میں غیر قانونی نوٹیفکیشن و آرڈیننس جاری کئے جارہے ہیں نفیسہ شاہ نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ پیپلز پارٹی کاموقف ہے کہ احتساب کیلئے اتفاق رائے سے قانون لایا جائے احتساب ہونا چاہیے سیاسی انتقام نہیں ہونا چاہیے پیپلزپارٹی نے حکومت کی چوری پکڑی ہے کلبھوشن کو این آر او دے رہے تھے قومی سلامتی پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائیگا انہوں نے کہا کہ اے پی سی پر چیئرمین بلاول کوشش کررہے ہیں مگر شہباز شریف کی طبیعت خراب ہونے پر تاخیر ہورہی ہے کشمیر کا معاملہ ابھیندن اور کلبھوشن کا معاملہ قومی مفاد میں کئے جاتے رہے ہیں ان کوپارلیمنٹ میں لے کر آنا چاہیے تھا۔ اس موقع پر پلوشہ خان نے کہا کہ ملک کی اہم ترین وزارتیں غیر ملکی امپورٹڈ لوگوں کے حوالے کردی گئی ہیں فیصلے غیر ملکی مشیر کررہے ہیں ان کو قومی خزانوں سے تنخواہیں اور مراعات دی جارہی ہیں جوپاکستان کے خزانے پربوجھ بنے ہوئے ہیںان غیر ملکیوں کے ہاتھوں پاکستان کے لوگوں کو بے روزگار کیا جارہا ہے انہوں نے کہا کہ زلفی بخاری دبئی میں جاکر معاہدے کررہے ہیں ان کو کس نے اجازت دی اور کس طرح غیر آئینی طریقے سے یہ معاملات چلائے جارہے ہیں اور امریکی شہریت رکھنے والے کو آبی ذخائر کی وزارت دے دی گئی ہے جس نے الیکشن کمیشن میں اپنا غلط ڈیٹا جمع کروایا ہے۔ مشیر خزانہ حفیظ شیخ نیو سلک نام کی کمپنی میں پارٹنر ہیں جوانڈیا کی کمپنی ہے حکومتی اراکین سب کچھ حلال ہوجاتا ہے اپوزیشن کریں تو شورمچا دیتے ہیں انہوں نے کہا کہ ابراج گروپ نے سو ملین ڈالر کاہیلتھ کیئر فنڈز میں فراڈ کیا ہے ان کا تعلق وزیراعظم سے ہے انہوں نے کہا کہ پاکستان کا پہلا وزیراعظم ہے جو آج تک فرنٹ مورچوں پر نہیں گئے انہوں نے کہا کہ کلبھوشن کے حوالے سے بند کمروں میں آرڈیننس جاری کئے جارہے ہیں انہوں نے کہا کہ ایک وزیر نے ریمنڈ ڈیوس کے حوالے سے بات کی ہے ریمنڈ ڈیوس کیس کے حوالے سے جے آئی ٹی بنائی جائے تاکہ عوام کے ساتھ حقائق آئیں انہوں نے کہا کہ نیب اور نیازی گٹھ جوڑ واضح ہوچکا ہے کہ حکومتی اراکین کو تحفظ مل رہا ہے جبکہ اپوزیشن لوگوں کو انتقام کا نشانہ بنایا جارہا ہے نیب کی حراست میں ایک پروفیسر کی موت ہوئی جن کو ہتھکڑی لگی ہوئی تھی اور بھی لوگ نیب کی حراست میں جان کی بازی ہار گئے ان کی ایف آئی آر کس پر کٹے گی اس حکومت کا یہ حال ہے کہ ابھیندن کو ایک دن بھی نہیں رکھ سکی اور کلبھوشن کے حوالے سے آرڈیننس لائے جارہے ہیں کلبھوشن پورے ملک کا مجرم ہے ۔