پاکستان پیپلز پارٹی کی مرکزی ڈپٹی سیکریٹری اطلاعات پلوشہ خان نے کہا ہے کہ نام نہاد صحت کارڈ سفید تعویز کی طرح ہے، اس سے عوام کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔ اس سفید تعویز کی آڑ میں عمران خان نے سرکاری ہسپتالوں میں عوام کے مفت علاج کی سہولیات بھی چھین لی ہیں۔ سلیکٹڈ وزیراعظم کی طرف سے خیبرپختونخواہ میں نام نہاد انصاف صحت کارڈ کی تقسیم اور تشہیر پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے پلوشہ خان نے کہا کہ صدر آصف علی زرداری نے پاکستان بیت المال کو حقیقی معنوں میں عوام کی خدمت کا ادارہ بنایا تھا۔ ملک بھر کے ہر بڑے ہسپتال میں پاکستان بیت المال کے فارم موجود ہوتے تھے تاکہ کسی بیماری کے علاج کے لئے سات لاکھ روپے تک سرکاری علاج کرایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ نام نہاد صحت کارڈ کی کوئی افادیت نہیں اور نہ ہی کوئی ہسپتال اسے مانتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کے ذریعے غریب اور مستحق خواتین کی کفالت کی جاتی تھی بلکہ اس پروگرام کے تحت وسیلہ روزگار، وسیلہ صحت، وسیلہ تعلیم جیسے پروگرام شروع کئے گئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے مدینہ ریاست کا ڈھونگ رچا کر ریاست کو جہنم بنا دیا ہے کیونکہ بیروزگاری اور معاشی بدحالی کی وجہ سے بھوک اور بیماریاں پھیلی ہیں جس کے ذمے دار عمران خان ہیں۔ آج سرکاری ہسپتالوں میں معمولی ادویات بھی دستیاب نہیں ہیں۔ ایک کروڑ نوکریا دینے کا جھانسہ دے کر 20 لاکھ برسر روزگار لوگوں کو بیروزگار کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کا دوسالہ دور اقتدار تباہی اور بربادی کا نمونہ رہا ہے