اسلام آباد (9 اکتوبر 2020) پاکستان پیپلزپارٹی نے نیویارک میں قائم قومی ایئرلائن کے روز ویلٹ ہوٹل کی بندش پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے بندش کے فیصلے کی پارلیمان سمیت ہر فورم پر بھرپور مخالفت کا اعلان کردیا ہے۔ پیپلزپارٹی کی مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے کہا ہے کہروز ویلٹ ہوٹل کی بندش اپنوں کو نوازنے کی ایک سازش کے سوا کچھ نہیں نیویارک میں قائم ہوٹل قومی اثاثہ ہے پیپلزپارٹی اس ہوٹل کو بیچنے کی کسی صورت اجازت نہیں دے گی۔ ڈاکٹر نفیسہ شاہ کا اپنے جاری ایک بیان میں کہنا تھا کہ حکومت نے قومی اثاثے کی اہمیت رکھنے والے ہوٹل سے متعلق اپوزیشن جماعتوں اور پارلیمان کو اعتماد میں لئے بغیر ہی بندش کا فیصلہ کیا گیا ہے، حکمران جماعت کے اس یکطرفہ فیصلے کو مسترد کرتے ہیں، نااہل اور سلیکٹڈ حکمران قومی اثاثے اور اداروں کی اہمیت اور قمیت سے نا واقف ہیں حکومت جان بوجھ کر ایک کے بعد دوسرے قومی ادارے کو تباہ کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ ڈاکٹر نفیسہ شاہ کا کہنا تھا کہ اس سے قبل پائلٹس کے لائنس پر جھوٹا بیان دیکر سول ایوی ایشن جیسے اہم ادارے کی ساکھ مجروع کی گئی وزیر ہوابازی کے اس بے بنیاد بیان کے بعد پہلی مرتبہ قومی ایئرلائن پر مختلف ممالک میں پابندی عائد ہوئی جو تضحیک ہے لیکن قومی ایئر لائن اور پائلٹس کی کاکردگی پر سوالات اٹھانے والے وزیر ہوابازی نے نہ بیان واپس لیا نہ معافی مانگی لیکن اب پیدا ہونے والی صورتحال کے بعد وزیر ہوابازی کا مستعفی ہونا ناگزیر ہے۔ ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے حکومت کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت قومی اداروں کو ہڑپ کرنے، اور اداروں کی ساکھ کو نقصان پہنچانے کا سلسلہ فوری بند کرتے ہوئے روز ویلٹ ہوٹل کی بندش کا فیصلہ واپس لے۔