(24 اکتوبر 2020) چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری گلگت بلتستان کے انتخابات کے سلسلے پارٹی کی انتخابی مہم چلا رہے ہیں۔ انہوں نے آج سکردو ضلع کے مختلف مقامات گول، سرمک، مہدی آباد میں کارنر میٹنگز کے خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ جن آئینی حقوق کے لئے ہم پاکستان کے دیگر صوبوں میں مطالبات کر رہے ہیں وہی مطالبات ہم جی بی کے عوام کے لئے بھی کر رہے ہیں تاکہ ان کی آواز اسلام آباد تک پہنچائی جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ اگر جی بی کے عوام پاکستان کے وزیراعظم کا انتخاب نہیں کر سکتے تو وہ پھر کس طرح وہ اپنے حقوق حاصل کر سکتے ہیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ عمران خان جھوٹ بولتے ہیں اور انہوں نے جنوبی پنجاب کے لئے وعدہ کیا تھا اور کہا تھا کہ اقتدار کے پہلے 100 روز میں وہ جنوبی پنجاب کو صوبہ بنا دیں گے لیکن عمران خان نے یہ وعدہ پورا نہیں کیا صرف پاکستان پیپلزپارٹی ہی وہ واحد پارٹی ہے کہ جو جی بی کے عوام کو ان کے حقوق مہیا کر سکتی ہے۔ پیپلزپارٹی نے جی بی کو پہلا گورنر دیا اور پہلا وزیراعلیٰ بھی پیپلزپارٹی ہی نے دیا اور پیپلزپارٹی نے 2018ءکے انتخابی منشور میں جو وعدے جی بی کے عوام سے کئے ہیں وہ سب پورے کئے جائیں گے۔ جی بی کے عوام سے کئے جانے والے وعدے پورے کرنے کے لئے جی بی کے عوام کو پیپلزپارٹی کو ووٹ دینا ہوگا اور جی بی میں اقتدار میں لانا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کے جھوٹ اور ملکی تباہی کے بعد جی بی سے لے کر کراچی تک “گو عمران گو” کا نعرہ لگایا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سب ہی پی ٹی آئی کی حکومت سے تنگ ہیں چاہے وہ لیڈی ہیلتھ ورکرز ہوں یا کسان اور چاہے وہ مزدور ہوں یا سرکاری ملازمین۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کی تبدیلی اصل میں تباہی تھی جس سے ہمیں جی بی کے عوام کو بچانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جی بی کے عوام کو لولی پاپ نہیں چاہئیں بلکہ ان کو ان کے حقوق چاہئیں۔ شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شہید محترمہ بینظیر بھٹو کی پہلی ترجیح یہ ہوتی تھی وہ ملک کے عوام اور خاص طور پر نوجوانوں کو روزگار مہیا کریں۔ شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے لیڈی ہیلتھ ورکرز کا پروگرام شروع کیا جو ملک کے ہر گاﺅں اور دیہات تک میں عوام کی خدمت کر رہے ہیں۔ صدر زرداری نے ملک کی غریب خواتین کے لئے بی آئی ایس پی پروگرام متعارف کرایا۔ ہم جی بی کے عوام کے لئے بھی ایسے ہی انقلابی پروگرام چاہتے ہیں۔ پیپلزپارٹی نے جی بی کے عوام کو خوراک پر سبسڈی دی جس سے ابھی تک عوام کو فائدہ پہنچ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شہید محترمہ بینظیر بھٹو کے خوابوں کو شرمندہ تعبیر کرنا چاہتے ہیں اور اس بات کے لئے انہیں جی بی کے عوام سے واضح مینڈیٹ کی ضرورت ہے تاکہ وہ اسلام آباد میں جی بی کے عوام کے حقوق کی جنگ لڑ سکیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ چاہتے ہیںکہ جی بی میں عوام کو اس کٹھ پتلی اور سلیکٹڈ حکومت سے بچا سکیں۔ ہم جی بی کے عوام کو عمران خان کے جھوٹے وعدوں سے بچا سکیں اور انہیں عمران خان کی جانب سے دی گئی تباہی سے بچا سکیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے ہمیشہ ملک میں ملازمت کے مواقع پیدا کئے اور 2008ءکے انتخابات میں تو عوام کا نعرہ ہی یہی تھا کہ “بینظیر آئے گی، روزگار لائے گی”۔ انہوں نے جی بی کے عوام سے کہا کہ بیلٹ پیپر پر تیر کے نشان پر مہر لگائیں اور پیپلزپارٹی کو پورے جی بی سے جتوائیں