چیئرمین پاکستان پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو نے گلگت بلتستان سے ایف سی آر کا خاتمہ کیا، شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے جی بی کے عوام کی خدمت کی اور آصف علی زرداری نے جی بی کو شناخت دی، جی بی کو اسمبلی دی، جی بی کو پہلا گورنر دیا اور جی بی کو پہلا وزیراعلیٰ دیا۔ اب یہ انتخابات اقتدار میں آنے کے لئے نہیں ہیں بلکہ یہ جی بی کے عوام کے لئے بہتر مستقبل کی جدوجہد ہے۔ چیئرمین پی پی پی نے یہ بات سکردو میں انتخابی مہم کے دوران ایک کارنر میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ سابق گورنر جی بی قمر زمان کائرہ، سابق وزیراعلیٰ سید مہدی شاہ، سعدیہ دانش اور بابو استوری بھی چیئرمین کے ہمراہ تھے۔ بلاول بھٹو زرداری نے ان پارٹی جیالوں کو زبردست خراج تحسین اور خراج عقیدت پیش کیا جنہوں نے شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شہید محترمہ بینظیر بھٹو کا ساتھ دیا۔ اس طرح مہدی شاہ بھی انہی لوگوں میں سے ایک ہیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے مہدی شاہ کو “بابائے روزگار” کا لقب دیا جو کہ مہدی شاہ نے جی بی کے 25ہزار نوجوانوں کو اپنے دور حکومت میں روزگار دیا تھا۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پیپلزپارٹی جی بی کے عوام کو بھی وہی حقوق دینا چاہتی ہے جو ملک کے باقی حصوں میں پارٹی نے عوام کو دلوائے ہیں۔ اب یہ شہید ذوالفقار علی بھٹوکے نواسے اور شہید محترمہ بینظیر بھٹو کے بیٹے کا وعدہ ہے کہ حکومت میں آنے کے بعد پہلی ترجیح نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی ہوگی۔ پیپلزپارٹی نے ہمیشہ عوام کو روزگار دیا ہے اور جن لوگوں کو فاشسٹ حکومتوں نے نوکریوں سے نکالا تھا انہیں ان کی ملازمتوں پر بحال کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ روزگار اور حقوق جی بی کے عوام کا حق ہے اور اس حق کے حصول کے لئے عوام پاکستان پیپلزپارٹی کو ووٹ دے۔ انہوں نے کہا کہ آپ کے ووٹوں کی مدد سے ہم عوام کو پی ٹی آئی کی حکومت کی تباہی سے تحفظ دے سکیں گے۔ چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ سندھ کی طرح جی بی میں بھی ہسپتالوں کا جال بچھایا جائے گا۔ اسی طرح مزدوروں کے لئے بینظیر مزدور کارڈ جاری کئے جائیں گے جیسا کہ سندھ میں کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اسکردو میں بھی بجلی گھر لگائیں گے جیسا کہ انہوںنے تھر میں تھر کول پاور پراجیکٹ لگایا ہے۔ چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ آج اب ہر حلقے کے لوگ چاہے وہ لیڈی ہیلتھ ورکرز ہوں یا سرکاری ملازمین پی ٹی آئی کی حکومت کے خلاف سراپا احتجاج بنے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کٹھ پتلی پی ٹی آئی نے ایک اور اپنی کٹھ پتلی جماعت کو ہمارے مقابلے میں اس حلقہ انتخاب میں کھڑا کر دیا ہے لیکن عوام انہیں جانتے ہیں اور انہیں مسترد کر دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ جی بی کے عوام کو ایک بہادر نمائندہ چاہیے اور وہ خود جی بی کے عوام کے نمائندہ ہیں۔ انہوں نے عوام سے کہا کہ وہ گھر گھر جا کر پارٹی کا پیغام پہنچائیں اور انتخابات کے دن لوگوں کو گھروں سے نکالیں اور پولنگ اسٹیشنوں پر لا کر تیر پر مہر لگوائیں۔ انہوں نے کہا کہ شہید ذوالفقار علی بھٹواور شہید محترمہ بینظیر بھٹو کا جی بی کے لئے عوام کے لئے خوشحالی کا مشن پورا کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے تمام قوتوں کو خبردار کیا کہ جی بی کے عوام کے ووٹ چرانے کی اجازت پیپلزپارٹی نہیں دے گی اور اگر ایسا کیا گیا تو وہ خود جی بی کے عوام کے ساتھ اسلام آباد جا کر احتجاج کریں گے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ وہ 15نومبر تک جی بی کے عوام کے درمیان ہی رہیں گے اور فتح کا جشن منائیں گے۔ اس سے قبل پی پی پی چیئرمین نے پیپلزلائرز فورم کے وکلاءاور ڈسٹرکٹ بار کے نمائندوں کے وفد سے ملاقات کی۔ انہوں نے آج اسکردو کے مختلف مقامات پر پیپلزپارٹی کے انتخابی دفاتر کا افتتاح بھی کیا۔ انہوں نے سدپارہ روڈ، حاجی گام اور نیو رنگا میں بھی پارٹی انتخابی دفاتر کا افتتاح کیا۔ حسن کالونی چوک کے مقام پر پیپلزیوتھ آفس کا بھی افتتاح کیا۔ انہوں نے پیپلزیوتھ آفس کے مقام پر کارکنوں سے ایک مختصر خطاب بھی کیا اور انہوں نے بتایا کہ پیپلزہوتھ شہید محترمہ بینظیر بھٹو نے قائم کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے نوجوانوں کو ایک نوجوان قیادت کی ضرورت ہے لیکن ماضی میں انہیں ایک کھلاڑی کے ذریعے دھوکہ دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ نوجوانوں کو جمہوریت سے روشناس کرانے کی ضرورت ہے جو کہ جمہوریت ہی سے خوشحالی آتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت نوجوانوں کو سب سے بڑا مسئلہ روزگار کا درپیش ہے۔ روزگار پیپلزپارٹی ہی نوجوانوں کو مہیا کر سکتی ہے۔ اس موقع پر پیپلزیوتھ کے کارکنوں نے “اب آیا ہے بلاول-پھر سے چلے گا تیر، جئے بینظیر-جئے بینظیر” کے نعرے بھی لگائے۔