گلگت/اسلام آباد(16 نومبر 2020) پاکستان پیپلزپارٹی نے گلگت بلتستان میں دھاندلی کے خلاف ڈپٹی کمشنر کے دفتر واقع گلگت میں دھرنا دے دیا ہے۔ پاکستان پیپلزپارٹی کے امیدوار رات تک سارے پولنگ اسٹیشنوں کے نتائج آنے کے بعد 400 سے زیادہ کی اکثریت سے جیت رہے تھے لیکن آج صبح انہیں دو ووٹوں سے ہارا ہوا قرار دیا گیا۔ چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے بھی اس احتجاجی دھرنے میں شرکت کی اور وہاں دھرنے میں موجود شرکاءسے خطاب کیا۔ اپنی پر جوش تقریر میں انہوںنے کہا کہ انتخابات سے قبل پیپلزپارٹی کے امیدواروں پر دباﺅ ڈالا جا رہا تھا کہ وہ پارٹی چھوڑ کر پی ٹی آئی کی جانب سے انتخابات میں حصہ لیں لیکن سوائے ایک امیدوار کے باقی سارے جیالے پارٹی کے ساتھ وفادار رہے۔ انہوں نے کہا کہ جب مقتدر قوتوں نے یہ دیکھا کہ سیاچن سے لے کر گلگت تک عوام بڑی تعداد میں پیپلزپارٹی کو ووٹ دینے کے لئے تیار ہے تو وہ بوکھلا گئے۔ الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی کے وزراءکی غیرقانونی سرگرمیوں کی حمایت شروع کر دی جہا ں تک کہ چیف الیکشن کمشنر نے ان کے اور اپوزیشن کے خلاف پریس کانفرنس کی بجائے اس کے کہ وہ حکومتی وزراءکو غیرقانونی کام کرنے سے روکتے۔ انہوں نے کہاکہ الیکشن قوائد کی خلاف کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے بھی جی بی دورہ کیا۔ چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ پاکستان پیپلزپارٹی کی متعدد نشستیں چرائی گئی ہیں لیکن کسی کو بھی اس پر شک نہیں ہونا چاہیے کہ ہم ایسا کرنے کی اجازت دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہر اس جگہ جہاں دھاندلی کی گئی ہے وہاں احتجاج کیا جائے گا۔ ہم نہ کسی کٹھ پتلی، کسی سلیکٹڈ یا سلیکٹرکو انتخابات چوری کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔ سلیکٹرز کو یہ معلوم نہیں تھا کہ جی بی میں پی ٹی آئی کا کوئی وجود ہی نہیں۔ یہاںتک کہ پی ٹی آئی نے تو اپنا وزیراعلیٰ بھی نامزد نہیں کیا۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پیپلزپارٹی کے وزیراعلیٰ امجد حسین ایڈووکیٹ ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہر شخص یہ جانتا ہے کہ جی بی کے عوام پاکستان پیپلزپارٹی کے ساتھ ہیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ جی بی کے عوام نے ڈوگرہ راج سے اپنے حقوق چھینے تھے اور وہ ایک مرتبہ پھر اپنے حقوق چھین لیں گے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ سیاستدانوں پر بھی بہت دباﺅ ہوتا ہے اور مجھ پر بھی آپ کا بہت دباﺅ ہے لیکن وہ سلیکٹرز کو خبردار کرتے ہیں کہ وہ اس حد تک آگے نہ جائیں کہ پیپلزپارٹی بھی انتہائی قدم اٹھانے پر مجبور ہو جائے۔ انہوں نے عوام سے کہا کہ وہ اپنا احتجاج جاری رکھیں اور اگر آپ کی چھینی ہوئی سیٹیں آپ کو نہیں ملتی تو وہ عوام کی قیادت کرتے ہوئے یہ دھرنا اسلام آباد لے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ جب تک عوام کو ان کے حقوق نہیں مل جاتے وہ کہیں نہیں جا رہے۔ چیئرمین پی پی پی نے کہا کہ اگر یہ دھاندلی کا نتیجہ نہیں بدلا گیا تو وہ ایک انتہائی قدم اٹھائیں اور مشکل راستے کا اختیار کریں گے جو راستہ فتح کا راستہ ہے۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ انہوں نے پہلے ہی خبردار کر دیا تھا کہ اگر جی بی کے عوام کا فیصلہ نہ مانا گیا تو اس کے انتہائی مضر نتائج نکلیں گے۔