اسلام آباد (29 نومبر2020) پا کستان پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینزکی مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے کہا ہے کہ ملتان میں سیاسی کارکنوں کی گرفتاریاں ثابت کرتی ہیںکہ عمران خان واقعی بزدل خان ہے۔ کٹھ پتلی اور نالائق حکمران ریاستی مشینری میں چھپتے ہیں۔ عمران خان میں اگر ہمت ہے تو کل ملتان آکر دکھائیں۔ انہوں نے کہا کہ سلیکٹڈ اور کٹھ پتلی کو اکڑ خانی زیب نہیں دیتی۔ انہوںنے کہا کہ کٹھ پتلی نے اپوزیشن پر مارشل لاءلگایا ہے۔ وہ اقتدار کے آخری دنوں میں ہوش و ہواس کھو بیٹھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کے چار صاحبزادوں پر مقدمات داخل کئے گئے ہیں۔ قاسم گیلانی کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا گیا ہے۔ جلسے سے تین روز قبل گرفتاریاں، پکڑ دکڑ سلیکٹڈ وزیراعظم کی بوکھلاہٹ ظاہر کر رہی ہے۔ پیپلزپارٹی کی مرکزی سیکریٹری اطلاعات پلوشہ خان نے کہا ہے کہ قاسم گیلانی اور دیگر کارکنوں پر تشدد پولیس کا تشدد عمران اور بزدار پر قرض رہے گا اور وہ سیاسی کارکنوں پر تشدد کا خمیازہ بھگتنے کے لئے خود کو تیار رکھیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان اعلیٰ سرکاری افسروں کو سیاسی مخالفین کے خلاف اکسا رہے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ جیالے ڈٹ کر مقابلہ کریں گے نیازی کی طرح چھپ کر نہیں بیٹھیں گے۔ پاکستان پیپلزپارٹی کے ڈپٹی سیکریٹری اطلاعات منور انجم نے پنجاب پولیس اور انتظامیہ کو تنبیہہ کی ہے کہ وہ سلیکٹڈ وزیراعظم کو کندھا نہ دیں۔ پنجاب میں پی ٹی آئی کے غنڈوں کی پولیس کی وردیاں دی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملتان میں جلسہ روکنا کٹھ پتلی کے بس کی بات نہیں ہے۔ جبکہ پیپلزپارٹی کی رہنما سینیٹر سحر کامران نے کہا کہ ملتان کی پولیس اور انتظامیہ لیڈورں اور کارکنوں کو دھمکیاں دے رہی ہے کہ ملتان کو چھوڑ دیں۔ سحر کامران نے کہا کہ جیالے گرفتاریوں سے نہیں ڈرتے۔ گرفتار کرے یا جیل بھیجے ملتان چھوڑ کر نہیں جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ملتان کے حالات ثابت کر رہے ہیں کہ سلیکٹڈ وزیراعظم پی ڈی ایم کے جلسے سے گھبرائے ہوئے ہیں۔