اسلام آباد (12 جنوری2021) پاکستان پیپلزپارٹی نے ایک پرائیویٹ ٹی وی چینل کی جانب سے پیپلزپارٹی کے حکومت کے ساتھ رابطہ کرنے کا الزام لگانے کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔ وہ چینل یہ الزام لگا رہا ہے کہ پیپلزپارٹی نے پارلیمنٹ کے اندر نیب پر تنقید کرنے سے احتراز برتنا شروع کردیا ہے۔ پیپلزپارٹی پارلیمنٹیرینز کے سیکریٹر جنرل فرحت اللہ بابر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ نہ تو حکومت کے ساتھ پارٹی کا کوئی بیک چینل رابطہ ہوا ہے اور نہ ہی پیپلزپارٹی نے نیب کو ایک سیاسی انجینئرنگ کے طور پر استعمال کرنے والے ادارے کی حیثیت سے مذمت کرنا ختم کی ہے۔ سینیٹ میں پیپلزپارٹی ہی نے یہ تحریک پیش کی کہ نیب حکومت کا سیاسی بازو بن کر سیاسی انجینئرنگ کر رہا ہے۔ پیپلزپارٹی اس بات پر یقین رکھتی ہے کہ جب تک احتساب کو سیاسی طور پر نشانہ بنایا جانے کے لئے استعمال کیا جائے گا تب تک نہ تو پاکستان معاشی طور پر ترقی کر سکتا ہے اور نہ ہی پاکستان میں سیاسی استحکام پیدا ہو سکتا ہے۔ احتساب کا عمل اس وقت تک بے معنی رہے گا جب تک کہ پاکستان کے ہر شہری کو ایک ہی قانون کے تحت نہ برتا جائے اور احتساب کا قانون ایسا ہونا چاہیے جو آئین کے آرٹیکل 10-A کے مطابق منصفانہ طریقہ کر اختیار کرے۔ آئین کا آرٹیکل 10-A یہ کہتا ہے کہ ہر شخص کو ایک منصفانہ اور باقائدہ طریقے سے پرکھا جائے۔ یہ سخت افسوسناک بات ہے کہ ایک ٹی وی چینل نے حکومت کے پروپیگنڈا کا ہتھیار بنتے ہوئے حزب اختلاف میں نفاق کے بیج بونے کی کوشش کی جبکہ موجودہ جمہوری تحریک اس سلیکٹڈ حکومت اور اس کے سلیکٹرز کے خلاف ہے۔