کراچی(31جولائی) پاکستان پیپلزپارٹی سندھ کے سیکریٹری اطلاعات سینیٹر عاجز دھامراہ نے تحریک انصاف کے سربراہ عمران کے خطاب میں صدر آصف علی زرداری کے حوالے سے الزامات لگانے پر سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ عمران خان ہمیشہ اپنی اناء اور ضد کے گھوڑے پر سوار ہو کر پیپلزپارٹی پر تنقید کرتے ہیں،جلسہ سے خطاب کے دوران بھی انہوں نے پیپلزپارٹی پر تنقید کی ہے لیکن وہ بھول گئے ہیں کہ اگر ملکی تاریخ میں کسی پارٹی کو بدترین سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا گیا ہے یا کسی ایک پارٹی کا کٹھن سے کٹھن احتساب کیا گیا ہے وہ پاکستان پیپلزپارٹی ہے، سینیٹر عاجز دھامراہ نے کہا کہ عمران یہ کیوں بھول جاتے ہیں کہ آصف علی زرداری کا وہ نام لے رہے ہیں ان کو بغیر کسی ثبوتوں کے جیلوں میں ڈالا گیا، تمام کیسز اور ریفرنسز کا کوئی ثبوت نہ مل سکا، ہم تو کہتے ہیں کہ آصف علی زرداری کو بلا کسی ثبوت کے 11 سال جیل میں رکھنے کا حساب دیا جائے،سینیٹر عاجز دھامراہ نے کہا کہ احتساب کے حوالے سے پیپلزپارٹی اور اس کی قیادت پہلی باری بھگت چکی ہے لیکن اس کا کوئی ثبوت نہیں مل سکا ہے، انہوں نے کہا کہ ملک میں سب کے لیے ایک جیسا احتساب کرنے کے لیے ایک بل سینیٹ سے منظور ہو چکا ہے عمران خان اس بل کو قومی اسیمبلی سے منظور کروانے میں مدد کریں، اگر عمران خان خود کو صاف شفاف رہنما سمجھتے ہیں تو سب سے پہلے اپنے احتساب کا مطالبہ کیوں نہیں کرتے،وہ الیکشن کمیشن میں بیرونی فنڈنگ میں غبن پر کیوں جواب نہیں دیتے ہیں؟ وہ سپریم کورٹ میں اپنا منی ٹریل کیوں آگے پیچھے کر رہے ہیں،وہ سب سے پہلے تو اپنے احتساب کی بات کریں، آج عمران خان کو چاہیے کہ وہ اداروں سے شہید ذوالفقار علی بھٹو کا کیس دوبارہ کھولنے کا مطالبہ کریں، سینیٹر عاجز دھامراہ نے کہا کہ عمران خان ہمیں دھمکیاں دے رہیں لیکن نہ وہ اس ملک کے وزیراعظم ہیں نہ ہی سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ہیں نہ ہی کسی ادارے کے سربراہ،جو وہ خود اپنی مرضی سے کسی کا احتساب کریں گے، اس طرح تو آمروں نے اپنی مرضی کا احتساب کیا، نواز شریف نے بھی اپنی مرضی کا احتساب کیا، ان کے بوس مشرف نے بھی مرضی کا احتساب کیا اب عمران خان بھی یہ شوق پورا کر لیں۔